پنج شنبه - 2019 مارس 21
ہندستان میں نمائندہ ولی فقیہ کا دفتر
Languages
Delicious facebook RSS ارسال به دوستان نسخه چاپی  ذخیره خروجی XML خروجی متنی خروجی PDF
کد خبر : 71919
تاریخ انتشار : 26/3/2015 19:16
تعداد بازدید : 24

پاکستان اپنی فوج کو سعودی جنگ میں نہ دھکیلے

جنرل جمشید ایاز خان نے حکومت پاکستان کو متنبہ کیا ہے کہ وہ پاکستانی فوج کو یمن کے عوام کے خلاف سعودی جنگ میں نہ دھکیلے۔
پاکستانی فوج کے ریٹائرڈ جنرل جمشید ایاز خان نے کہا ہے کہ یمن پر سعودی عرب اور اسکے اتحادیوں کے حملے، یمن میں قیام امن اور مشرق وسطی کے لئے خطرہ ہیں۔ جنرل ایاز خان نے کہا ہےکہ کسی بھی طرح کی فوجی کاروائی سے علاقے میں قیام امن کے عمل کو نقصان پہنچے گا لہذا بحران یمن کو حل کرنے کا واحد راستہ متحارب فریقوں میں مذاکرات ہے۔ جنرل جمشید ایاز خان نے اسلام آباد میں ارنا کے نمائندے سے گفتگو میں کہا کہ پاکستان کی مسلح افواج ملک میں انتہا پسندی اور دہشتگردی کا مقابلہ کررہی ہیں اور ایسے موقع پر اسلام آباد کو بیرون ملک کسی بھی طرح کی فوجی کاروائیوں بالخصوص یمنی عوام کے خلاف سعودی عرب کے اتحاد میں شامل نہیں ہونا چاہیے۔ واضح رہے کہ یمن کی عوامی تحریک انصاراللہ نے پاکستانی حکومت سے کہا ہے کہ وہ یمنی عوام کے خلاف جاری جارحیت میں شمولیت کے تعلق سے اپنا موقف واضح کرے۔ جنرل جمشید ایاز خان نے کہا ہے کہ پاکستان اس وقت یمنی قوم کے خلاف فوجی مہم میں شرکت کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے کیونکہ پاکستانی مسلح افواج اس وقت ملک کے اندر متعدد محاذوں پر انتہا پسندی اور دہشتگردی کے خلاف سرگرم عمل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت پاکستانی فوج نے اندرون ملک تکفیری دہشتگردی کا صفایا کرنے کا تہیہ کررکھا ہے اور اسی ہدف کے لئے پاکستانی فوج ملک میں کاروائیاں بھی کررہی ہے۔ انہوں نے یمن پر سعودی عرب اور اس کے پٹھوؤں کی بمباری کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اگر ریاض، یمن میں امن چاہتا ہے تو اسے یمن کے داخلی امور میں مداخلت نہیں کرنی چاہیے۔


نظر شما



نمایش غیر عمومی
تصویر امنیتی :