Tuesday - 2018 Dec 11
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 74183
Published : 6/5/2015 10:30

امریکی منصوبہ: عراقی شخصیتوں کا ردعمل

کردوں اور اہلسنت قبائل کو مسلح کرنے کے لئے امریکی کانگریس کے منصوبے کے خلاف عراقی شخصیتوں کا ردعمل جاری ہے- السومریہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق پارلیمنٹ میں عراقی اہلسنت الائنس کے نمائندے مشعان الجبوری نے بغداد حکومت کی اجازت کے بغیر کردوں اور اہلسنت قبائل کو مسلح کرنے کے امریکی کانگریس کے منصوبے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ امریکی حکومت نے عراق کے سلسلے میں ماضی کی غلطیوں سے عبرت حاصل نہیں کی ہے اور وہ عراق اور عراقی عوام سے دشنمی جاری رکھے ہوئے ہے- الجبوری نے کہا کہ عراقی اہلسنت کے نمائندے کی حیثیت سے میں ان لوگوں کو غدار سمجھتا ہوں جو اس ملک کے قانون کے دائرے سے ہٹ کر امریکہ کے ساتھ اشتراک عمل انجام دے رہے ہیں- قابل ذکر ہے کہ امریکی کانگریس کے نمائندے ایک ایسے منصوبے پر غور کر رہے ہیں جس کے مطابق واشنگٹن، عراق کی مرکزی حکومت کی اجازت کے بغیر اس ملک کے کردوں اور اہلسنت قبائل کو مسلح کر سکتا ہے- عراق کی البدر تنظیم کے جنرل سیکریٹری ہادی العامری نے کہا ہے کہ اس ملک کی عوامی رضاکار فورسز کسی کو بھی عراق کے داخلی امور میں مداخلت کی اجازت نہیں دیں گی اور عراقیوں کے درمیان تفرقہ ڈالنے کے لئے اٹھنے والے ہاتھ کاٹ دیئے جائیں گے- عراقی پارلیمنٹ میں حزب الدعوہ پارٹی کے رکن علی البدیری نے ان سیاستدانوں کی گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے جو امریکہ کی جانب سے عراقی گروہوں کو مسلح کرنے کے منصوبے کے حامی ہیں- علی البدیری نے کہا کہ عراق کے بعض حصوں پر داعش کا قبضہ اور عراقی گروہوں کو مسلح کرنے کے لئے امریکی کانگریس کا حالیہ منصوبہ، اس ملک کو کمزور کرنے اور اس کے انسانی و مادی وسائل کو ختم کرنے کی سازش ہے-


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Dec 11