Monday - 2018 Sep 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 75794
Published : 2/6/2015 19:51

ہمسایہ ممالک کے ساتھ تعاون کا فروغ ہماری ترجیح ہے

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا ہے کہ ہمسایہ ممالک کے ساتھ تعاون کا فروغ ایران کی خارجہ پالیسی کی ترجیحات میں سر فہرست ہے۔ وہ پیر کی شام لبنان کے المیادین ٹیلی ویژن چینل سے خصوصی گفتگو کر ر ہے تھے۔ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا کہ خلیج فارس کے عرب ممالک کو مشترکہ مسائل کے حل کے لئے واضح بات چیت شروع کرنی چاہئے- انہوں نے کہا کہ ہمسایہ ممالک کے ساتھ تعلقات میں فروغ اور تقویت کو ایران کی خارجہ پالیسی میں ترجیحی مقام حاصل ہے اور ان ممالک کے لئے ہر خطرہ اسلامی جمہوریہ ایران کے لئے بھی خطرہ شمار ہوتا ہے- ان کا کہنا تھا کہ ایران کی بنیادی توجہ خلیج فارس کے عرب ممالک، یا دوسرے الفاظ میں، خلیج فارس تعاون کونسل کے ممالک پر ہے کیونکہ ان ممالک کا تعلق اسٹریٹجک علاقے سے ہے۔ انہوں نے یہ بات زور دیکر کہی کہ علاقے کے تمام ممالک کو مشترکہ مسائل کے حل کے لئے ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کرنا چاہئے- ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ خلیج فارس اور مشرق وسطی کے تمام ہمسایہ ممالک امن و استحکام کے ساتھ رہیں تاکہ سلامتی اور ترقی و پیش رفت کی نعمت سے بہرہ مند ہوسکیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمسایہ ممالک کو درپیش ہر خطرہ ایران کے لئے بھی خطرہ شمار ہوتا ہے اور اسی نظریئے کی بنیاد پر ایران نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں عراق کی مدد کی ہے- اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے علاقائی ممالک سے سلامتی کے قیام اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں تعاون کی اپیل کی- محمد جواد ظریف نے یمن پر حملے کے سلسلے میں سعودی عرب پر تنقید کی اور کہا کہ ہوائی حملوں اور پیسے کے ذریعہ امن و سلامتی کے قیام کا زمانہ گزر چکا ہے- انہوں نے ایک بار پھر ایران کے اس موقف کا اعادہ کیا کہ تہران علاقے میں امن و سلامتی کے قیام کی غرض سے تعاون کے لئے تیار ہے- انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے اپنے کسی بھی ہمسایہ ملک پر حملہ نہیں کیا ہے بلکہ ہمیشہ اپنے ہمسایہ ممالک کی مدد کی ہے- محمد جواد ظریف نے اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ ایران گزشتہ پینتیس سال کے دوران ہمیشہ ہمسایہ ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات کی برقراری کا خواہاں رہا ہے کہا کہ ایران نے سعودی عرب کو علاقائی طور پر تنہا کرنے کی کبھی بھی کوشش نہیں کی ہے لیکن افسوس سعودی عرب بڑے بڑے ممالک کے ساتھ تعلقات قائم کرکے ایران کو عالمی سطح پر الگ تھلگ کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Sep 24