Tuesday - 2018 Nov 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 77836
Published : 1/7/2015 19:25

مذاکرات کا بائیکاٹ سیاسی خودکشی کے مترادف

امریکا کی جانب سے مذاکرات سے کنارہ کشی اس کے لئے سیاسی خودکشی کے مترادف ہو گی- ایران کی وزارت خارجہ کے سابق ترجمان حمید رضا آصفی نے ایران کے نیوز چینل کے ساتھ گفتگو میں کہا کہ ایٹمی مذاکرات میں خود کو وقت کا پابند نہیں بنانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ اگر امریکا اپنے تخمینوں اور اندازوں میں غلطی کر بیٹھے اور مذاکرات سے اس طرح نکل جائے کہ فریقین کے درمیان کوئی سمجھوتہ طے نہ ہو پائے تو اس میں شکست امریکا ہی کی ہوگی اور یہ مسئلہ امریکا کے لئے سیاسی خودکشی کے مترادف ہو گا- انھوں نے مزید کہا کہ مذاکرات کے اختتام کے لیے وقت کا تعین نہیں کرنا چاہیے، اس میں کوئی شک نہیں ہونا چاہئے کہ اگر یہ طے ہو کہ ان مذاکرات کا نتیجہ نکلے گا تو یہ آخری لمحات میں سامنے آئے گا کیونکہ دونوں فریق آخری لمحوں میں اپنے کارڈ شو کریں گے تاکہ آخری لمحات میں یہ سمجھوتہ ہو جائے۔ ایران کی وزارت خارجہ کے سابق ترجمان نے مذاکراتی عمل میں بعض مغربی اور صیہونی حکام کی جانب سے ایرانی وفد پر ڈالے جانے والے دباؤ کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ان دنوں میڈیا کی یلغار میں اضافہ، زیادہ سے زیادہ مراعات حاصل کرنے کی غرض سے ہے۔ واضح رہے کہ ویانا میں ایران اور گروپ پانچ جمع ایک کے درمیان تیس جون کو مذاکرات کی ڈیڈ لائن ختم ہوگئی اور ان کی مدت میں مزید ایک ہفتے کی توسیع کی گئی ہے تاکہ مذاکرات نتیجہ خیز ثابت ہو سکیں۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Nov 20