Monday - 2018 Nov 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 77926
Published : 4/7/2015 13:29

آیت اللہ العظمی سیستانی کے نمائندے کی انتہاپسندانہ نظریات کے مقابلے پر تاکید

عراق کے نامور مرجع تقلید آیت اللہ العظمی سیستانی کے نمائندے نے انتہا پسندانہ نظریات کا مقابلہ کئے جانے کی ضرورت پر تاکید کی ہے- موصولہ رپورٹوں کے مطابق کربلائے معلی میں آیت اللہ العظمی سیستانی کے نمائندے حجت الاسلام و المسلمین شیخ احمد صافی نے کہا ہے کہ بڑھتی ہوئی دہشت گردی کی جانب سے ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے اور انتہاپسندانہ افکار کے بھرپور مقابلے کی ضرورت کا احساس، ہشت گردوں کے مقابلے کا پیش خیمہ ہے- حجت الاسلام و المسلمین شیخ احمد صافی نے مزید کہا کہ دہشت گردی کے مسئلے کا حل فوجی اور سیکورٹی طریقوں سے ممکن نہیں ہے بلکہ اس کے لئے دوسرا طریقہ تلاش کرنا ہوگا اور ان انتہاپسندانہ افکار و نظریات کے خلاف جد و جہد کرنا ہوگی جو فریب خوردہ عناصر کے ذہنوں میں بیٹھ گئے ہیں کیونکہ یہ افکار پرامن بقائے باہمی کو مسترد کرتے ہیں اور طاقت کے ذریعے اپنے نظریات مسلط کرنا چاہتے ہیں- کربلائے معلی میں آیت اللہ العظمی سیستانی کے نمائندے نے جمعے کے خطبوں میں تاکید کے ساتھ کہا کہ انتہاپسندانہ نظریات ایک رات میں ختم نہیں ہو سکتے بلکہ اس کے لئے طویل مدت منصوبہ تیار اور ثقافت کو پروان چڑھائے جانے کی ضرورت ہے- حجت الاسلام و المسلمین شیخ احمد صافی نے کہا کہ آج کی دنیا کا ایک اہم مسئلہ دہشت گردی ہے اور یہ کسی ایک ملک تک محدود نہیں ہے- انھوں نے کہا کہ دنیا میں بڑھتی ہوئی دہشت گردی اس بات کی متقاضی ہے کہ اس کے خلاف سب مل کر جدوجہد کریں اور اس مسئلے کو حل کرنے کی کوشش کریں-


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Nov 19