يکشنبه - 2019 مارس 24
ہندستان میں نمائندہ ولی فقیہ کا دفتر
Languages
Delicious facebook RSS ارسال به دوستان نسخه چاپی  ذخیره خروجی XML خروجی متنی خروجی PDF
کد خبر : 78293
تاریخ انتشار : 9/7/2015 9:13
تعداد بازدید : 14

صرف مسلمانوں کا اتحاد ہی قدس کو آزاد کرا سکتا ہے

ماسکو میں عالمی یوم القدس کی مناسبت سے منعقدہ بین الاقوامی گول میز کانفرنس کے شرکا نے کہا ہے کہ صرف مسلمانوں کا اتحاد ہی بیت المقدس کو صیہونیوں کے چنگل سے آزاد کرا سکتا ہے-
ارنا کی رپورٹ کے مطابق روس میں ایران کے سفیر مہدی سنائی نے منگل کو اس گول میز کانفرنس کے آغاز میں، بانی انقلاب اسلامی حضرت امام خمینی(رح) کی جانب سے ماہ رمضان کے آخری جمعے کو عالمی یوم القدس کے طور پر منائے جانے کے اعلان کی جانب اشارہ کیا- اس کانفرنس میں مہدی سنائی نے کہا کہ مسئلہ فلسطین، عالم اسلام کے اہم مسائل میں شامل ہے اور بیت المقدس کی آزادی کے لئے تمام مسلمانوں کی جانب سے کوشش کرنے کی ضرورت ہے- ماسکو میں فلسطین کے سفیر نوفل عبدالحافظ نے بھی تقریر کرتے ہوئے فلسطینی عوام کے حقوق کی حمایت کے لئے ایران کی قیادت اور عوام کی کوششوں کو سراہا اور کہا کہ علاقے کے بحرانوں میں صیہونی حکومت کی مداخلت آشکارا ہے اور شام میں داعش اور جبھۃ النصرہ جیسے دہشت گرد گروہوں کے لئے صیہونی حکومت کی حمایت سب پر عیاں ہے- روس میں شام کے سفیر ریاض حداد نے بھی اس گول میز کانفرنس میں کہا کہ بیت المقدس صرف فلسطینیوں کا مسئلہ نہیں ہے بلکہ ان سب کا مسئلہ ہے جو عدل و انصاف اور امن کے خواہاں ہیں- اور قدس کا عالمی دن، سامراجیت اور ایک قوم پر روا رکھے جانے والے مظالم کے خاتمے کے لئے منایا جاتا ہے- ماسکو میں عراق کے نائب سفیر القاضی عامر التوپی نے بھی اس گول میز کانفرنس میں کہا کہ فلسطین کا مسئلہ مشرق وسطی کے علاقے کا اہم ترین مسئلہ ہے اور امام خمینی (رح) نے اپنی گہری فکر و ادارک کے ذریعے اس مسئلے کی اہمیت کو بخوبی درک کیا اور ایران کے انقلاب کے ابتدائی دنوں میں ہی فلسطینی عوام کی جدوجہد کی حمایت کرتے ہوئے ماہ رمضان المبارک کے آخری جمعے کو عالمی یوم القدس کا نام دے دیا-


نظر شما



نمایش غیر عمومی
تصویر امنیتی :