Tuesday - 2018 August 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 80039
Published : 3/8/2015 19:53

علاقائی ممالک کے ساتھ تعاون ہماری پالیسی ہے

اسلامی جمہوریہ ایران کے نائب وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے ہمسایہ اور علاقائی ممالک کے ساتھ تعاون کو ایران کی خارجہ پالیسی کی ترجیحات میں سے قرار دیا ہے- ایرانی نائب وزیر خارجہ امیر عبداللہیان نے اتوار کے روز العالم ٹی وی کے ساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ہمسایہ اور علاقائی ممالک کے ساتھ تعاون کو ایران کی خارجہ پالیسی کی ترجیحات میں شامل قرار دیا اور کہا کہ عارضی ایٹمی مسئلہ حل ہونے کے بعد اب علاقائی بحرانوں کے حل کے لئے علاقے کے ممالک کو ایک مناسب موقع مل گیا ہے- انہوں نے کہا کہ ایران نے گروپ پانچ جمع ایک کے ساتھ صرف ایٹمی معاملے سے متعلق مذاکرات کئے ہیں اور ایرانی وزارت خارجہ کے پاس گروپ پانچ جمع ایک کے ساتھ علاقائی مسائل کے بارے میں مذاکرات کا کوئی ایجنڈا نہیں ہے کیونکہ ایران کے نزدیک علاقائی مسائل علاقائی ممالک سے تعلق رکھتے ہیں- انہوں نے سعودی عرب کے ساتھ موجودہ تعلقات کے بارے میں کہا کہ علاقائی مسائل، خاص طور سے بحران یمن، کے حل کے لئے سعودی عرب کی طرف سے طاقت کا استعمال ایک اسٹریٹیجک غلطی ہے لیکن پھر بھی ہمارا یہ خیال ہے کہ ایران اور سعودی عرب کے تعلقات قابل قبول اور فطری تعلقات کی حیثیت سے بحال ہونے چاہییں- حسین امیر عبداللہیان نے کہا کہ سعودی عرب بصیرت کے ساتھ کام کرے اور علاقے، خاص طور سے یمن، کے لوگوں کا قتل عام بند کرے نیز تمام علاقائی مسائل کے بارے میں سیاسی طریقہ اختیار کرے- انہوں نے بحرین کو اسلحہ برآمد کرنے کے الزام سمیت ایران کے خلاف بحرین کے الزامات کو بے بنیاد قرار دیا اور کہا کہ اگر اسلامی جمہوریہ ایران بحرین میں مداخلت کرتا تو بحرین کی صورت حال اس وقت کچھ اور ہی ہوتی- ایران کے نائب وزیر خارجہ نے شام کی تازہ ترین صورت حال کے بارے میں کہا کہ خوش قسمتی سے شام کے بارے میں علاقے کے سیاسی رہنماؤں کے نظریات میں ایک اسٹریٹیجک تبدیلی پیدا ہوئی ہے- ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ چار سال کے دوران بہت سے بیرونی سیاسی رہنما جنگ کو بحران شام کا حل سمجھتے تھے لیکن اب متعدد سیاسی رہنما بحران شام کے لئے سیاسی راہ حل کو مناسب ترین طریقہ قرار دیتے ہیں-


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 August 14