Thursday - 2018 Oct. 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 80240
Published : 6/8/2015 21:23

امریکی صدر کے بیانات پر ایرانی وزیر خارجہ کا ردعمل

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے امریکی صدر کے بیانات پر ردعمل ظاہر کیا ہے۔ موصولہ رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے امریکی صدر باراک اوباما کے ایران سے متعلق بیانات پر ردعمل ظاہر کیا ہے۔ وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا ہے کہ ایرانی عوام کے سلسلے میں امریکا کی دسیوں برس کی غلط پالیسی کا امریکا کو کوئی فائدہ نہیں ہوا ہے۔ محمد جواد ظریف نے امریکی صدر باراک اوباما کے بیانات پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے کبھی بھی ایٹمی ہتھیاروں کی تیاری کی کوشش نہیں کی ہے اور نہ ہی آئندہ کبھی کرے گا اس لئے یہ دعوی صرف ملکی ناقدین اور صیہونیوں کو خوش کرنے کے مقصد سے کیا گیا ہے کہ ایران اور گروپ پانچ جمع ایک کے معاہدے میں ایٹمی ہتھیاروں تک ایران کی رسائی کے تمام راستے بند کر دیے گئے ہیں- اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ حالیہ چند برسوں کے واقعات سے اس بات کی نشاندہی ہوتی ہے کہ امریکی حکومتوں اور خطے میں ان کے اتحادیوں خصوصا صیہونی حکومت کے غیر ذمہ دارانہ اقدامات اور پالیسیاں مشرق وسطی میں دہشت گردی، انتہا پسندی اور بدامنی پھیلنے کا سبب بنی ہیں اور خطے اور دنیا کے لوگوں کے لئے ان پالیسیوں اور اقدامات کا نتیجہ سوائے تباہی و بربادی، جنگوں اور انتہاپسندی کے اور کچھ برآمد نہیں ہوا ہے۔ واضح رہے کہ امریکی صدر باراک اوباما نے بدھ کے دن کہا تھا کہ ویانا ایٹمی معاہدے سے ایران کے رویے میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی- امریکی صدر نے ایران سے بقول ان کے ایٹمی ہتھیاروں سے صرف نظر کرنے کی اپیل کی ہے۔ باراک اوباما نے اپنے ناقدین کی خوشنودی حاصل کرنے کے لئے جنگ کے آپشن کو مسترد نہیں کیا اور کہا کہ وہ پہلے سفارت کاری کو آزمائیں گے اور اس کے بعد جنگ کے بارے میں سوچیں گے۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Oct. 18