Friday - 2018 Nov 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 80986
Published : 18/8/2015 13:20

جنگی قیدیوں کی تاریخ ایران کی تاریخ کا اہم باب: رفسنجانی

اسلامی جمہوریہ ایران کی تشخیص مصلحت نظام کونسل کے سربراہ نے آٹھ سالہ مقدس دفاع کے رہا ہونے والے جنگی قیدیوں کی تاریخ کو ایران کی تاریخ کا اہم باب قرار دیا ہے۔ تشخیص مصلحت نظام کونسل کے شعبہ تعلقات عامہ کی رپورٹ کے مطابق تشخیص مصلحت نظام کونسل کے سربراہ آیت اللہ ہاشمی رفسنجانی نے آٹھ سالہ مقدس دفاع کے دوران صدامی فوجیوں کے ہاتھوں گرفتار اور پھر بعد میں رہا ہونے والوں میں سے بعض ایرانی جانبازوں کے ساتھ ملاقات میں کہا کہ ایران کے جنگی قیدیوں نے جس طرح کی قربانیاں دیں اور ایثار و فداکاری کا مظاہرہ کیا اس کی مثال دنیا کی کسی جنگ اور کسی بھی جگہ نہیں ملتی ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ مقدس دفاع کے دوران صدام کے فوجیوں کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے ایرانی مجاہدین نے اپنی جانوں، مال اور خاندانوں تک کو داؤ پر لگا دیا تھا۔ آیت اللہ ہاشمی رفسنجانی نے مزید کہا کہ ایران کے جنگی قیدیوں نے جو قابل فخر کارنامے انجام دیئے وہ دنیا میں رونما ہونے والی تمام جنگوں میں بے مثال ہیں۔ تشخیص مصلحت نظام کونسل کے سربراہ کا کہنا تھا کہ آٹھ سالہ مقدس دفاع کے رہا ہونے والے ایرانی جنگی قیدی ایک زندہ اور گرانقدر سرمایہ ہیں اور لوگ جنگ کی تاریخ سے جس قدر درس حاصل کرتے ہیں اسی قدر درس وہ ان جنگی قیدیوں کو دیکھ کر حاصل کرتے ہیں۔ تشخیص مصلحت نظام کونسل کے سربراہ آیت اللہ ہاشمی رفسنجانی نے دہشت گرد گروہ داعش کی تشکیل کی نوعیت اور اسباب پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ ایران کے جن خبیث دشمنوں نے ایرانی جوانوں پر بہیمانہ تشدد کرنے کے سلسلے میں بعثیوں کی حمایت کی تھی آج وہی عراق میں دہشت گرد گروہ داعش کو وجود میں لائے ہیں۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 Nov 16