دوشنبه - 2019 مارس 25
ہندستان میں نمائندہ ولی فقیہ کا دفتر
Languages
Delicious facebook RSS ارسال به دوستان نسخه چاپی  ذخیره خروجی XML خروجی متنی خروجی PDF
کد خبر : 84509
تاریخ انتشار : 4/10/2015 12:49
تعداد بازدید : 2

منی سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کی اجتماعی قبروں میں تدفین پر ردعمل

سعودی عرب کے قومی انسانی حقوق کمیشن نے اعلان کیا ہے کہ منی سانحے کے جنازے علیحدہ قبروں میں دفن کئے جائیں گے۔
سعودی عرب کی سرکاری نیوز ایجنسی واس کی رپورٹ کے مطابق اس ملک کے قومی سوسائٹی براے انسانی حقوق کے صدر مفلح بن ربیعان قحطانی نے کہا ہے کہ تمام مراحل انجام پانے کے بعد منی سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کے جنازے الگ الگ قبروں میں دفن کئے جائیں گے-
 مفلح بن ربیعان قحطانی نے منی سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کے جنازے اجتماعی قبر میں دفن کئے جانے کی افواہ مسترد کرتے ہوئے کہا کہ جن افراد پر منی سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کے امور کی ذمہ داری ہے وہ جنازوں کے دفن کے لئے تیار ہونے سے پہلے ان کے حقوق کی حفاظت کے لئے خصوصی اقدامات کرتے ہوئے ان کے فنگرپرنٹ اور چہرہ نگاری جیسی تمام اطلاعات کو درج کریں گے- 
اس سے قبل ایسی خبریں سامنے آئی تھیں کہ سعودی عرب منی سانحے میں فوت ہونے والے ان افراد کو اجتماعی قبر میں دفن کرے گا جن کی شناخت نہیں ہو سکی ہے اس طرح کے افراد کی تعداد کم سے کم چھ سوبتائی جاتی ہے- 
آل سعود کے اس اقدام پر ان اسلامی ممالک کی جانب سے بڑے پیمانے پر ردعمل سامنے آیا تھا جنھوں نے منی سانحے کے بعد اپنے بہت سے حاجیوں کے گم ہونے پر تشویش کا اظہار کیا تھا- 
چوبیس ستمبر دوہزار پندرہ میں منی میں عیدالضحی کے موقع پر رمی جمعرات کے لئے جاتے وقت سعودی حکام کی بد انتظامی کے باعث پیش آنے والے سانحے کے نتیجے میں ہزاروں افراد جاں بحق ہوگئے تھے-


نظر شما



نمایش غیر عمومی
تصویر امنیتی :