Tuesday - 2018 April 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 85451
Published : 16/10/2015 19:26

سابق افغان صدر کی امریکہ پر کڑی نکتہ چینی

افغانستان کے سابق صدر حامد کرزئی نے افغانستان میں امریکہ کی فوجی موجودگی کے جاری رہنے پر تنقید کی ہے۔
حامد کرزئی نے جمعرات کو رشیا ٹوڈے سے گفتگو میں کہا ہے کہ بلاشبہ افغان فوج بہادر ہے لیکن اس طاقتور فوج کے باوجود جب تک بیرونی مداخلت جاری رہے گی افغانستان جوں کا توں رہےگا۔
حامد کرزئی نے کہا کہ انہوں نے اپنے دور صدارت میں امریکہ اور دیگر ملکوں کے حکام سے تبادلہ خیال کیا تھا۔ افغانستان کے سابق صدر نے کہا کہ انہوں نےمسلح افواج کی ٹریننگ، افغانستان کے باہر طالبان کو لیس کئےجانے اور ان کے خفیہ ٹھکانوں کے بارے میں مغربی ملکوں بالخصوص امریکہ کے ساتھ گفتگو کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب تک ان مسائل کو حل نہیں کیا جائے گا افغانستان کے مسائل ختم نہیں ہوسکتے۔
قابل ذکر ہے کہ امریکی صدر اوباما نے جمعرات کو وائٹ ہاوس میں ایک بیان میں افغانستان میں دوہزار سولہ کے بعد بھی امریکی فوجی موجودگی قائم رکھنے کاجواز پیش کرتے ہوئے دعوی کیا تھا کہ افغان سکیورٹی فورسز ملک میں امن قائم رکھنے کی توانائی نہیں رکھتیں 
اوباما نے کہا کہ دوہزار سولہ کے بعد بھی پانچ ہزار پانچ سو امریکی فوجی بعض فوجی اڈوں میں تعینات رہیں گے جن میں کابل کے قریب بگرام فوجی اڈہ نیز جلال آباد اور قندوز کے فوجی اڈے شامل ہیں۔
ادھر اطلاعات ہیں کہ امریکہ نے اپنے نیٹو اتحادیوں سے بھی درخواست کی ہے کہ افغانستان میں اپنے فوجی تعینات رکھیں۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 April 24