پنج شنبه - 2019 مارس 21
ہندستان میں نمائندہ ولی فقیہ کا دفتر
Languages
Delicious facebook RSS ارسال به دوستان نسخه چاپی  ذخیره خروجی XML خروجی متنی خروجی PDF
کد خبر : 86696
تاریخ انتشار : 6/11/2015 19:5
تعداد بازدید : 2

خطے کے مستقبل پر ایران اور روس کے باہمی تعاون کے اثرات

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر انصاف اور رشین فیڈریشن کونسل کے نائب سربراہ نے خطے کو درپیش مشکلات کے حل اور خطے کے مستقبل کے سلسلے میں دونوں ممالک مشترکہ مواقف اور باہمی تعاون کو موثر قرار دیا ہے۔

ارنا کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر انصاف مصطفی پور محمدی نے سینٹ پیٹرز برگ میں بدعنوانی کے مقابلے سے متعلق عالمی کنونشن کے آٹھویں اجلاس کے موقع پر رشین فیڈریشن کونسل کے نائب سربراہ الیاس اوماخانوف سے ملاقات کی۔

مصطفی پور محمدی نے اس ملاقات میں ایران اور روس کے بڑھتے ہوئے تعلقات کی جانب اشارہ کیا اور کہا کہ شام کے بارے میں ایران اور روس کا اتحاد خطے کی تقدیر بدل سکتا ہے۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر انصاف نے کہا کہ ایران اور روس کا باہمی تعاون خطے میں امریکہ اور اس کے اتحادیوں کو لوٹ مار کی اجازت نہیں دے گا۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر انصاف نے اس امید کا اظہار کیا کہ مشرق وسطی کےعلاقے میں دہشت گردوں کا صفایا کر دیا جائے گا اور شام سمیت خطے کی اقوام اپنے اپنے ملک کی تقدیر کا فیصلہ خود کریں گی۔

رشین فیڈریشن کونسل کے نائب سربراہ الیاس اوماخانوف نے بھی اس ملاقات میں کہا کہ دنیا میں سب انسانوں کو مساوی حقوق حاصل ہونے چاہئیں اور اگر امریکہ کو انتخاب کا حق حاصل ہے تو دوسروں کو بھی یہ حق حاصل ہونا چاہئے۔ الیاس اوماخانوف نے انسانی اصولوں اور بین الاقوامی قوانین کی بنیاد پر ممالک کے تعلقات کی توسیع کی ضرورت پر تاکید کی۔


نظر شما



نمایش غیر عمومی
تصویر امنیتی :