دوشنبه - 2019 مارس 25
ہندستان میں نمائندہ ولی فقیہ کا دفتر
Languages
Delicious facebook RSS ارسال به دوستان نسخه چاپی  ذخیره خروجی XML خروجی متنی خروجی PDF
کد خبر : 86785
تاریخ انتشار : 7/11/2015 20:16
تعداد بازدید : 4

فلسطین کا دفاع، واجب شرعی ہے: آیۃ اللہ اراکی

مجمع جہانی تقریب مذاہب اسلامی کے سیکریٹری جنرل نے کہا ہے کہ مقبوضہ علاقوں کی مکمل آزادی تک جہاد اور فلسطین کا دفاع جاری رکھنا،تمام مسلمانوں کے لئے واجب شرعی ہے اور اس پر تمام علماء اسلام متفق ہیں-
مجمع جہانی تقریب مذاہب اسلامی کے سیکریٹری جنرل آیت اللہ محسن اراکی نے لبنان کے دارالحکومت بیروت میں ملت فلسطین کی مزاحمت و استقامت اور انتفاضہ کے دفاع کے لئے "اتحاد برائے فلسطین" کے عنوان سے منعقدہ مزاحمتی علماء الائنس کانفرنس میں کہا ہے کہ ملت فلسطین کی استقامت اور انتفاضہ کی کسی بھی صورت میں، خواہ وہ مالی ہو یا انسانی یا اسلحہ جاتی، ہر طرح کی مدد کرنا واجب شرعی ہے اور اس سے دریغ نہ کیا جائے-

آیت اللہ اراکی نے کہا کہ کوئی بھی عہدیدار، فلسطینی عوام کے حقوق اور حتی فلسطین کی ایک بالشت زمین کا بھی سودا نہیں کرسکتا اور کوئی بھی سازباز کا معاہدہ جو اس بات کا باعث بنے کہ حتی فلسطین کی ایک بالشت زمین بھی صیہونی حکومت کے قبضے میں باقی رہ جائے تو ایسا معاہدہ قابل قبول نہیں ہے-

انہوں نے کہا کہ صیہونی حکومت ایک جعلی اور غیر قانونی حکومت ہے جس کی بنیاد ہی قتل و غارتگری اور فلسطینیوں کے خلاف حملوں پر رکھی گئی ہے اور ایسی حکومت قانونی حیثیت کی حامل نہیں ہوسکتی اور جو بھی اسے قانونی حیثیت سے تسلیم کرے درحقیقت وہ بھی فلسطینیوں کے قتل عام کو جائز اور قانونی سمجھتا ہے- 

واضح رہے کہ مزاحمتی علماء الائنس کی ایک روزہ کانفرنس جمعے کو بیروت میں شروع ہوئی اور ملت فلسطین کی استقامت و مزاحمت نیز انتفاضہ کی حمایت میں ایک بیان جاری کرنے کے ساتھ اختتام پذیر ہوگئی-


نظر شما



نمایش غیر عمومی
تصویر امنیتی :