Thursday - 2018 August 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 88224
Published : 27/11/2015 17:8

دہشت گردی کے خلاف بین الاقوامی اتحاد کی تشکیل پر روس اور فرانس کے صدور کی تاکید

روس اور فرانس کے صدور نے دہشت گردی کے خلاف بین الاقوامی اتحاد کی تشکیل پر تاکید کی ہے۔

روئٹرز کی رپورٹ کے مطابق روس کے صدر ولادیمیر پوتن نے جمعرات کی رات اپنے فرانسیسی ہم منصب فرانسوا اولاند کے ساتھ ماسکو میں مشترکہ پریس کانفرنس میں کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کے لئے بین الاقوامی اتحاد کی تشکیل کی ضرورت سے متعلق روس اور فرانس کے مواقف ایک جیسے ہیں۔

روسی صدر نے اس بات کو بیان کرتے ہوئے کہ شام میں دہشت گردوں کے خلاف روس کے حملوں میں شدت پیدا ہوئی ہے کہا کہ فرانسیسی صدر کے ساتھ مذاکرات اعتماد کے ماحول میں ہوئے ہیں اور دونوں ممالک کو دہشت گردی سے جو نقصانات اٹھانا پڑے ہیں ان کے پیش نظر ان کو مل کر دہشت گردی کا مقابلہ کرنا چاہئے۔ 

روسی صدر نے کہا کہ پیرس اور ماسکو کے خلاف کئے جانے والے حالیہ دہشت گردانہ حملوں کی وجہ سے دونوں ممالک کو اب دہشت گردی کا مقابلہ مربوط انداز میں کرنا ہوگا اور ماسکو اس کے لئے آمادہ ہے۔ ولادیمیر پوتن نے کہا کہ شام کے صدر بشار اسد داعش کے خلاف جنگ میں روس کے اتحادی ہیں اور صرف شام کے عوام کو بشار اسد کے مستقبل کے بارے میں فیصلہ کرنے کا حق حاصل ہے۔ 

روسی صدر نے شام کی سرحد پر ترکی کی فوج کے ہاتھوں روسی طیارہ مار گرائے جانے کو خیانت سے تعبیر کیا اور کہا کہ اس بات کا تصور بھی نہیں کیا جاتا تھا کہ روس کا لڑاکا طیارہ ایک ایسا ملک مار گرائے گا جو روس کا اتحادی شمار ہوتا ہے۔ 

اس پریس کانفرنس میں فرانس کے صدر فرانسوا اولاند نے بھی اس بات کا دعوی کیا کہ شام کا بحران سیاسی طریقے سے ہی حل ہوسکتا ہے لیکن شام کے مستقبل میں بشار اسد کی کوئی جگہ نہیں ہے۔

فرانسیسی صدر نے دہشت گرد گروہ داعش کے ٹھکانوں پر اپنے ملک کے حملوں کے بارے میں کہا کہ فرانس داعش کے آئل ٹینکروں اور تیل کی تنصیبات پر اپنے حملے جاری رکھے گا۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 August 16