Sunday - 2018 Dec 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 89086
Published : 10/12/2015 16:13

ہارٹ آف ایشیا اجلاس کا مشترکہ اعلامیہ

سرتاج عزیز اور افغان وزیر خارجہ صلاح الدین ربانی نے مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران 43 نکاتی اعلامیہ کی تفصیلات بتائیں

اسلام آباد میں منعقدہ ہارٹ آف ایشیا اجلاس مشترکہ اعلامیہ  جاری کرنے کے بعد  اختتام پزیر ہوگیا۔

 اسلام آباد سے موصولہ اطلاعات کے مطابق ہارٹ آف ایشیا کانفرنس کا مشترکہ اعلامیہ جاری کردیا گیا ہے جس میں طالبان سمیت تمام دھڑوں کو مذاکرات کی میز پر لانے اور دہشت گردی کے خلاف مشترکہ حکمت عملی پر زور دیا گیا ہےہارٹ آف ایشیا کانفرنس کے اختتام پر پاکستان کے وزیراعظم کے مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے پریس بریفنگ میں مشترکہ اعلامیہ پڑھ کر سنایا۔
مشترکہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ کانفرنس میں شریک ممالک سمیت پوری دنیا افغانستان کی خود مختاری کا احترام کرے، پاکستان اور افغانستان ایک دوسرے پر الزام تراشی بند کریں وزیراعظم کے مشیر خارجہ سرتاج عزیز اور افغان وزیر خارجہ صلاح الدین ربانی نے مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران 43 نکاتی اعلامیہ کی تفصیلات بتائیں۔
اعلامیہ میں اس بات دنیا پر زور دیا گیا ہے کہ افغانستان کی خودمختاری کا احترام کیا جائے۔ رکن ممالک امن عمل میں کردار ادا کریں، پائیدار امن کیلئے طالبان کو مذاکرات کی میز پر آنا ہو گا۔ بات چیت کا سلسلہ جہاں سے ٹوٹا تھا وہیں سے شروع کیا جائے۔ افغانوں کی زیر قیادت امن عمل میں تعاون کیا جائے۔ سکیورٹی اور دہشتگردی خطرات کسی ایک ملک کے نہیں سب کے لئے یکساں ہیں دہشت گردوں کی مالی معاونت کو مل کر ختم کرنا ہو گا۔
سرتاج عزیز نے کہاکہ پاکستان افغانستان میں دیرپا امن اور استحکام کا خواہاں اور عوام پر مشتمل مفاہمتی عمل کا حامی ہے۔ افغان وزیر خارجہ صلاح الدین ربانی نے مشترکہ اہداف کے حصول کے لئے مشترکہ کوششوں کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہاکہ کانفرنس نے افغانستان کی مشکلات پر قابو پانے کیلئے افغانستان کی بھرپور مدد کے عزم کا اعادہ کیا۔ 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Dec 16