Tuesday - 2018 Dec 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 93552
Published : 24/1/2016 17:51

بغداد سے سعودی سفیر کو باہر نکالنے کا مطالبہ

بغداد میں سعودی عرب کے سفیر کے بے بنیاد بیانات کے باعث انھیں عراق سے باہر نکالنے کے مطالبات تیز ہوتے جا رہے ہیں -

عراق کے بعض وزراء اور سیاسی شخصیتوں نے سعودی سفیر کو بغداد سے باہر نکالنے کا مطالبہ کیا ہے- سومریہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق عراقی پارلیمنٹ کے خارجہ تعلقات کمیشن کے رکن خالد الاسدی نے ایک بیان میں بغداد میں سعودی عرب کے نئے سفیر ثامر السبھان کے بیانات کو عراق کے امور میں مداخلت اور سفارتی اصولوں کے منافی قرار دے کر اس کی مذمت کی - خالد الاسدی نے عراق میں سعودی عرب کے سفیر ثامر السھبان کے بیانات کو فرقہ وارانہ کشیدگی بڑھانے کی کوشش سے تعبیر کیا اور اپنے ملک کی وزارت خارجہ سے مطالبہ کیا کہ انھیں عراق سے باہر نکالا جائے-

بغداد میں سعودی عرب کے سفیر نے سنیچر کو سومریہ نیوز ایجنسی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا تھا کہ کردوں اور صوبہ الانبار کے شہریوں کی جانب سے عوامی رضاکار فورس الحشد الشعبی کے اس صوبے میں داخل ہونے کی مخالفت سے پتہ چلتا ہے کہ عراقی معاشرے میں اسے مقبولیت حاصل نہیں ہے-

دوسری جانب عوامی رضاکار فورس الحسد الشعبی کے ترجمان احمد الاسدی نے ثامر السھبان کو ایک ایسے ملک کا سفیر قرار دیا ہے جو دہشت گردی کی حمایت کرتا ہے- انھوں نے کہا کہ عوامی رضاکار فورس اور عراقی عوام کی اکثریت کی شان میں سعودی سفیر کی گستاخی باعث بنے گی کہ ہم داعش کو ختم کرنے اور اس کے غیر ملکی حامیوں کا مقابلہ کرنے پر زیادہ اصرار کریں-

دوسری جانب عراق کے وزیر نقل و حمل باقر جبر الزبیدی نے بھی سعودی سفیر کے بیانات کو سفارتی اصولوں کے منافی قرار دیا- عراقی وزیر نقل و حمل نے کہا کہ الحشدالشعبی رضاکار فورس نے اپنے سیکڑوں جوانوں کی قربانی دے کر دیالہ، صلاح الدین اور ایک سو ستّر شہروں اور دیہاتوں کو آزاد کرایا ہے اور عراقی عوام کے لئے باعث فخر ہے-

واضح رہے کہ سعودی عرب نے پچیس سال بعد ابھی حال ہی میں بغداد میں اپنا سفارت خانہ دوبارہ کھولا ہے- بغداد میں سعودی عرب کے نئے سفیر ثامر بن علی السھبان ایک اعلی سیکورٹی افسر ہیں اور انھوں نے گذشتہ برسوں میں عراق و شام میں دہشت گرد گروہوں کو منظم کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے-


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Dec 18