Sunday - 2018 Nov 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186337
Published : 25/3/2017 19:33

علم و معرفت کا بحر بیکراں

امام(ع) کے نزدیک سب سے زیادہ اہم مقصد ہمیشہ کے لئے اہل بیت(ع) کی فقہ اسلامی کو نشر کرنا تھا جس میں اسلام کی روح اور اس کا جوہر تھا ، امام (ع) نے اس کو زندہ کیا ،اس کی بنیاد اور اس کے اصول قائم کئے،آپ(ع) کے پاس ابان بن تغلب ،محمد بن مسلم، برید،ابو بصیر،فضل بن یسار ،معروف بن خربوذ، زرارہ بن اعین وغیرہ جیسے بڑے بڑے فقہاء موجود رہتے تھے،وہ فقہاء جنھوں نے ان کی تصدیق کے لئے روایات جمع کیں اور ان کی ذکاوت و ذہانت کا اقرار کیا اور اہل بیت(ع)کے علوم کی تدوین کا سہرا ان کے سر بندھتا ہے اگر یہ نہ ہوتے تو وہ بڑی فقہی ثروت جس پر عالم اسلام فخر کرتا ہے سب ضائع و برباد ہوجاتی۔

ولایت پورٹل:امام محمد باقر علیہ السلام ائمہ  اہل بیت میں سے ہیں جن کو اللہ نے اپنا پیغام پہنچانے کے لئے منتخب فرمایا ہے اور ان کو اپنے نبی(ص) کی وصایت و خلافت کے لئے مخصوص قرار دیا ہے۔
امام  محمد باقر علیہ السلام  نے اسلامی تہذیب میں ایک انوکھا کردار ادا کیا اور دنیائے اسلام میں علم کی بنیاد ڈالی ،امام  نے یہ کارنامہ اس وقت انجام دیا جب دنیائے اسلام میں ہر طرف فکری جمود تھا ،کوئی بھی تعلیمی اور علمی مرکزنہیں تھا،جس کے نتیجہ میں امت مسلسل انقلابی تحریکوں سے دو چار ہورہی تھی جن میں سے کچھ بنی امیہ کے ظلم و تشدد اور بربریت سے نجات حاصل کرنا چاہتے تھے اور کچھ لوگ حکومت پر مسلط ہو کر بیت المال کو اپنے قبضہ میں لینا چاہتے تھے ،انقلابات کے یہ نتائج علمی حیات کے لئے بالکل مہمل تھے اور ان کو عمومی زندگی کے لئے راحت کی کسی امید میں شمار نہیں کیا جاسکتا۔
امام محمد باقرعلیہ السلام نے علم کا منارہ بلند کیا ،اس کے لئے قواعد و ضوابط معین فرمائے، اس کے اصول محکم کئے آپ اس کے تربیتی و تہذیبی راستے میں اس کے قائد اور معلم و استاد تھے ،آپ نے علوم کو بہت وسعت دی، ان ہی میں سے علم فضا اور ستاروں کا علم ہے جس سے اس زمانہ میں کوئی واقف نہیں تھا، امام کو علم کے موجدین میں شمار کیا جا تا ہے۔(۱)
امام(ع) کے نزدیک سب سے زیادہ اہم مقصد ہمیشہ کے لئے اہل بیت(ع) کی فقہ اسلامی کو نشر کرنا تھا جس میں اسلام کی روح اور اس کا جوہر تھا ، امام (ع) نے اس کو زندہ کیا ،اس کی بنیاد اور اس کے اصول قائم کئے،آپ(ع) کے پاس ابان بن تغلب ،محمد بن مسلم، برید،ابو بصیر،فضل بن یسار ،معروف بن خربوذ، زرارہ بن اعین وغیرہ جیسے بڑے بڑے فقہاء موجود رہتے تھے،وہ فقہاء جنھوں نے ان کی تصدیق کے لئے روایات جمع کیں اور ان کی ذکاوت و ذہانت کا اقرار کیا اور اہل بیت(ع)کے علوم کی تدوین کا سہرا ان کے سر بندھتا ہے اگر یہ نہ ہوتے تو وہ بڑی فقہی ثروت جس پر عالم اسلام فخر کرتا ہے سب ضائع و برباد ہوجاتی۔
امام(ع) کی سیرت کے اعزاز وافتخار کے لئے یہ ہے کہ آپ نے فقہاء کی تربیت کی جس سے وہ تمام کے تمام بافضیلت ہوئے ،ان کو مرکزیت کے اعزاز سے نوازااور امت نے فتوے معلوم کرنے کے لئے اِن ہی فقہاء کی طرف رجوع کیا امام(ع) نے ابان بن تغلب کے لئے فرمایا:مدینہ کی مسجد میں بیٹھ کر لوگوں کو فتوے بتایا کر ومیں اپنے شیعوں میں تمہارے جیسے افراد دیکھنا پسند کرتا ہوں۔(۲)
جاری ہے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔ جیسا کہ مغربی دانشوروں نے امام محمد باقر(ع) کی یوں تعریف کی ہے کہ آپ مختلف علوم کا سرچشمہ ہیں اور ان علوم کی آپ نے اپنے شاگردوں کو تعلیم دی۔
۲۔نجاشی،ص ۲۸،جامع الروایات،ج۱،ص ۶ ۔


 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Nov 18