Monday - 2018 Oct. 15
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187756
Published : 8/6/2017 14:57

کریم اہل بیت(ع) کا کرم

ہم ایسے لوگ ہیں جن کی عطا و بخشش اور داد و دہش سر سبز و شاداب ہے جس میں آرز و اور امید چرتی رہتی ہے،ہم سوال کئے جانے سے پہلے ہی سخاوت کرتے ہیں تاکہ سائل کی آبرو محفوظ رہے،اگر سمندرکو ہماری بخشش کی فضیلت معلوم ہوتی تو وہ اپنی فیاضی سے شرمندہ ہو جاتا۔

ولایت پورٹل:امام حسن(ع) لوگوں میں سب سے زیادہ سخی تھے ،آپ اکثر غریبوں پر احسان فرماتے تھے ،کسی سائل کو کبھی رد نہیں کرتے تھے اور ایک مرتبہ آپ(ع) سے سوال کیا گیا کہ آپ(ع) سائل کو رد کیوں نہیں کرتے ہیں ؟توآپ(ع) نے فرمایا:بے شک میں اللہ کا سائل ہوں ،اسی سے لو لگاتا ہوں ،مجھے اس بات سے شرم آتی ہے کہ میں خود تو سائل ہوں اور سوال کرنے والے کو رد کردوں ،بیشک خدا کی مجھ پر اپنی نعمتیں نازل کرنے کی عادت ہے، لہٰذا میں نے بھی اس کی نعمتیں لوگوں کو دینے کی عادت بنالی ہے اور مجھے یہ خوف ہے کہ اگر میں نے اپنی داد و دہش کی عادت ختم کر لی تو کہیں خدائے وہاب اپنی عطا و بخشش کی عادت ختم نہ کر لے،اس کے بعد آپ نے یہ شعر پڑھے:
إِذا ما أَتانِي سَائِلُ قُلْتُ مَرْحَباً
بِمَنْ فَضْلُهٗ فَرْضٌ عَليَّ مُعَجَّلُ
وَمَنْ فَضْلُهٗ فَضْلٌ عَلیٰ کُلِّ فَاضِلٍ
وَأَفْضَلُ أَیَّامِ الْفَتیَ حِیْنَ یُسْأَلُ۔(۱)
ترجمہ:اگر میرے پاس کوئی سائل آتا ہے تو میں اسے خوش آمدید کہتا ہوں اور یہ کہتا ہوں کہ آپ کا احترام کرنا مجھ پر واجب ہے۔
آپ کا احترام ہر شخص پر فرض ہے اور انسان کے بہترین ایام وہ ہیں جن میں اس سے سوال کیا جائے۔
آپ(ع) کے دروازے پر محتاجوں اورفقیروں کی بھیڑ لگی رہتی تھی، آپ(ع) ان کے ساتھ احسان و نیکی کرتے اور انھیں ان کی خواہش سے زیادہ عطا کیا کرتے تھے ،مؤرخین نے آپ(ع)کے کرم و سخاوت کے متعدد واقعات نقل کئے ہیں، ہم ان میں سے بعض واقعات ذیل میں نقل کررہے ہیں :
۱۔ایک اعرابی نے آکر سوال کیا تو امام(ع) نے فرمایا: جو کچھ خزانہ میں ہے اس کو دیدو! اس وقت خزانہ میں دس ہزار درہم تھے،اس اعرابی نے امام (ع) کی خدمت میں عرض کیا :کیا آپ(ع) مجھے یہ اجازت مرحمت فرمائیں گے کہ میں آپ(ع) کی شان و مدح میں کچھ اشعار پڑھوں ؟ تو امام نے فرمایا:
نَحْنُ اُنَاسٌ نَوَالُنَا حَضِلُ
یَرْتَعُ فِیْهِ الرَّجاءُ وَالأَمَلُ
تَجُوْدُ قَبْلَ السَّؤالِ أَنْفُسُنَا
خَوْفاً علیٰ مائِ وَجْهِ مَنْ یَسَلُ
لَوْ یَعْلَمُ الْبَحْرُ فَضْلَ نَائِلِنَا
لَفَاضَ مِنْ بَعْدِ فَیْضِہٖ خَجَلُ ۔(۲)
ترجمہ:ہم ایسے لوگ ہیں جن کی عطا و بخشش اور داد و دہش سر سبز و شاداب ہے جس میں آرز و اور امید چرتی رہتی ہے۔
ہم سوال کئے جانے سے پہلے ہی سخاوت کرتے ہیں تاکہ سائل کی آبرو محفوظ رہے۔
اگر سمندرکو ہماری بخشش کی فضیلت معلوم ہوتی تو وہ اپنی فیاضی سے شرمندہ ہو جاتا۔
۲۔امام حسن(ع)ایک ایسے حبشی غلام کے پاس سے گذرے جو اپنے سامنے رکھی ہوئی روٹی کا ایک ٹکڑا خود کھاتا تھا اور دوسرا ٹکڑا اپنے کتے کو ڈال رہا تھا ،امام(ع) نے اس سے فرمایا:تم ایسا کیوں کر رہے ہو؟
اس نے کہا مجھے شرم آتی ہے کہ میں تو روٹی کھاؤں اور اس کو نہ کھلاؤں۔
امام (ع) نے اس غلام میں اس بہترین خصلت کا مشاہدہ فرمایا اور اس کو اس اچھی خصلت کی جزا دینا چاہی، اس کے احسان کے مقابلہ میں احسان کرنا چاہا تاکہ فضیلتوں کو رائج کیا جا سکے،اس سے فرمایا :تم اسی جگہ پر رہو ،پھر آپ(ع) نے اس کے مالک کے پاس جاکر غلام اور جس باغ میں وہ رہتا تھا اس کو خریدا اور اس کے بعد اسے آزاد کرکے اس باغ کا مالک بنا دیا۔(۳)
۳۔ایک مرتبہ امام حسن(ع) مدینہ کی ایک گلی سے گذر رہے تھے تو آپ(ع) نے سنا کہ ایک آدمی اللہ سے دس ہزار درہم کا سوال کر رہا ہے تو جلدی سے اپنے بیت الشرف میں آئے اور اس کے لئے دس ہزار درہم بھیج دیئے۔ (۴)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔نور الابصار،ص۱۱۱۔
۲۔اعیان الشیعۃ،ج۴،ص۸۹۔۹۰ ۔
۳۔البدایۃ و النھایۃ،ج۸،ص۳۸۔
۴۔طبقات الکبری،شعرانی،ج۱،ص۲۳،الصبان،ص ۱۱۷ ۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Oct. 15