Wed - 2018 Dec 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190359
Published : 5/11/2017 16:50

مولانا سید محمد مرتضٰی جونپوری

امربالمعروف و نہی عن المنکر ان کا شیوہ اور صحت روایت کی پابندی ان کا دستور تھا،علماء ہند و عراق و ایران سے علمی رابطے استوار اور تبادلہ افکار رہتا تھا،جونپور میں آپ کی وجہ سے علمی چہل پہل رہتی تھی آپ کا نادر کتب خانہ اہل علم کے لئے مرکز تھا۔

ولایت پورٹل:مولانا سید محمد مرتضٰی صاحب قبلہ ابن سید حسن صاحب قبلہ جونپوری مولوی گلشن علی صاحب دیوان ریاست بنارس کے نواسہ تھے۔مولانا محمد مرتضٰی صاحب بہت بڑے عالم،فقیہ،محدث اور صاحب سیرت و کردار بزرگ تھے،امربالمعروف و نہی عن المنکر ان کا شیوہ اور صحت روایت کی پابندی ان کا دستور تھا،علماء ہند و عراق و ایران سے علمی رابطے استوار اور تبادلہ افکار رہتا تھا،جونپور میں آپ کی وجہ سے علمی چہل پہل رہتی تھی آپ کا نادر کتب خانہ اہل علم کے لئے مرکز تھا۔
قلمی آثار
۱۔مفتاح الشفاعۃ فی اقامۃ الصلوۃ و الجماعۃ۔
۲۔اصلاح الرسوم۔
۳۔تزکیۃ الرحمٰن فی تقویۃ الایمان۔
۴۔فوائد القرآن۔
۵۔فضائل و اثرات آیات قرآن۔
۶۔الکلام الحسن۔
۷۔ارغام الماکرین و افہام الحائرین۔
۸۔رسالہ در رد انذار الناظرین۔
۹۔دفع الملال بکشف فضائل الآل فی جواب کشف الحال باجمال المقال۔
۱۰۔فوائد کربلائیہ۔
نوٹ:قارئین کرام! ہم نے سید کی اہم کتب کی فہرست کے تذکرے پر ہی اکتفاء کیا ہے ورنہ آپ نے بہت سی کتابیں لکھی ہیں جن میں بہت سی تو آپ کے زمانہ حیات میں ہی زیور طبع سے آراستہ ہوکر مؤمنین کی ارواح کو سیراب کرتی رہیں۔
وفات
مولانا سید محمد مرتضٰی جونپوری صاحب نے تقریباً ۱۳۳۷ ہجری/ ۱۹۱۸ء میں وفات پائی۔

مطلع انوار


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Dec 19